Home / پاکستان / جب بھی یہ مسجد مکمل ہوگی تمہارا انتقال ہو جائے گا، پاکستان کی ایسی مسجد جس کی تعمیر میں 50 برس لگ گئے

جب بھی یہ مسجد مکمل ہوگی تمہارا انتقال ہو جائے گا، پاکستان کی ایسی مسجد جس کی تعمیر میں 50 برس لگ گئے

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) ویسے تو پاکستان میں کئی تاریخی مساجد اور عبادت گاہیں موجود ہیں، جو اپنی تاریخ یا حسنِ تعمیر کی وجہ سے جانی جاتی ہیں لیکن شاید بہت کم لوگوں نے اس مسجد کا ذکر سن رکھا ہے جسے بنانے میں 50 برس لگے۔یہ مسجد رحیم یار خان کی تحصیل صادق آباد کی مرکزی شاہراہ پر واقع ہے۔

لیکن آج کل یہاں سے گزرنے والے مسافر عام طور پر نزدیک بنی نئی موٹروے پر فراٹے بھرتے یہاں سے گزر جاتے ہیں۔ تاہم پرانے وقتوں میں پنجاب اور سندھ کی سرحد کے قریب واقع اس مسجد کو دیکھنے لوگ دور دور سے آتے اور یہاں سے گزرنے والے مسافر بھی اس مسجد کی زیارت کو لازمی سمجھتے تھے۔یہ ذکر ہے بھونگ مسجد کا، جس کے ڈیزائن، طرزِ تعمیر اور خوبصورت خطاطی کی وجہ سے سنہ 1986 میں اسے آغا خان ایوارڈ برائے اسلامی فنِ تعمیر بھی دیا گیا۔لیکن اس مسجد کی تاریخ کیا ہے اور اسے مکمل کرنے میں اتنی دیر کیوں لگی؟ایک روایت کے مطابق اس مسجد کی تعمیر میں اتنا عرصہ اس لیے لگا کہ علاقے میں یہ بات مشہور تھی کہ اسے بنوانے والے رئیس نے اس مسجد کو اپنی زندگی کے دوران جان بوجھ کر مکمل نہیں کروایا۔ تو ایسا کیوں تھا؟ جاننے کے لیے پڑھتے رہیے۔رئیس غازی محمد کا تعلق انڈرھ قوم سے تھا جو راجپوتوں کی ایک شاخ تھی اور جسیلمیر اور بیکانیر (دور حاضر کا راجستھان) کے علاقے پر حکمران رہی۔ان کے مورث اعلیٰ محمد جیا مرحوم بھونگ میں اقامت گزین ہو گئے تھے جنھیں مشہور سہروردی بزرگ حضرت شیخ بہاؤالدین ذکریا ملتانی کے خلیفہ مجاز حضرت پیر موسیٰ نواب سے شرف بیعت حاصل تھا۔ ان کے خاندان کی دوسری شاخ سکھر میں قیام پذیر ہوئی جس کے سربراہ شیخ احمد تھے۔ یہ بھی حضرت پیر موسیٰ نواب کے مرید تھے۔انھوں نے عملاً فقیری اختیار کر لی تھی چنانچہ شکارپور، پنوں عاقل اور گھوٹکی میں ان کی درویشی کا سلسلہ اب بھی قائم ہے۔ قیام پاکستان کے وقت اس خاندان کے سربراہ رئیس غازی محمد تھے۔دولت و ثروت اور جاہ و حشمت کے باوجود وہ سادہ زندگی گزارنے کے قائل تھے۔ بے شمار زرعی اراضی ان کی ملکیت تھی، وہ فرسٹ کلاس آنریری مجسٹریٹ بھی رہے۔ وہ بہاولپور دربار میں کرسی نشین رہے اور بہاولپور کی پہلی اسمبلی کے قیام سے ہی سیاست کے میدان میں موجود رہے۔لیکن ان تمام اعزازات کے باوجود جو امتیازی وصف ان کی شخصیت کو نمایاں کرتا تھا وہ تھا ان کا مذہبی جذبہ، وہ اللہ اور پیغمبرِ اسلام کی خوشنودی کو ہر حال میں مقدم سمجھتے تھے۔ انھیں دینی کاموں میں بے حد دلچسپی تھی اور روایات کے مطابق یتیموں، بیواؤں اور غریبوں کی امداد و سرپرستی کا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتے تھے۔بھونگ مسجد جس مقام پر تعمیر ہوئی وہاں پہلے بھی ایک مسجد موجود تھی۔ رئیس غازی محمد نے اس مسجد کے سامنے ایک محل تعمیر کروایا تھا جہاں رئیس صاحب کے دوست خصوصاً امیر بہاولپور نواب صادق محمد خان قیام کر سکیں۔ شکار کریں اور دریا کے کنارے سیر کا لطف اٹھائیں۔ایک دن جب رئیس غازی محمد اسی مسجد میں نماز ادا کر رہے تھے تو انھیں احساس ہوا کہ محل کی شان و شوکت مسجد سے بڑھ گئی ہے۔ انھوں نے اسی وقت استغفار کیا اور مسجد کے مقام پر تقریباً دگنے رقبے پر ایک نئی مسجد تعمیر کرنے کا فیصلہ کیا۔ یہ سنہ 1932 کے لگ بھگ کی بات ہے۔مسجد کی تعمیر میں مصروف کاریگروں کے قیام و طعام کا انتظام بھونگ میں ہی کیا گیا تھا۔ ان کاریگروں کو بہت سی مراعات بھی حاصل تھیں۔ تب صادق آباد سے بھونگ تک مناسب ذرائع نقل و حمل موجود تھے نہ ہی پختہ سڑک تھی۔ لہٰذا بھاری مشینری اور تعمیراتی سامان صادق آباد ریلوے سٹیشن سے بھونگ تک تقریباً 20 کلومیٹر کچے راستوں پر بیل گاڑیوں اور اونٹوں پر لاد کر لایا جاتا تھا۔مسجد کی تعمیر کے لیے کوئی باقاعدہ نقشہ نہیں بنایا گیا تھا، رئیس غازی محمد کے ذہن میں محض ایک خاکہ تھا جس کے مطابق تعمیر کا آغاز کیا گیا۔رئیس غازی محمد مختلف ممالک میں جاتے، وہاں کی مساجد دیکھتے اور جو چیز پسند آ جاتی اس کے مطابق مسجد کی تعمیر میں تبدیلی کرواتے رہتے۔ اس طرح مسجد کے ڈیزائن میں کئی بار تبدیلی کی گئی اور کئی حصوں کو دوبارہ نئے سرے سے تعمیر کیا گیا۔ تعمیر میں اتنا عرصہ اس لیے لگا کہ علاقے میں یہ بات مشہور تھی۔
کہ رئیس غازی محمد اس مسجد کو جان بوجھ کر مکمل نہیں کروا رہے کیونکہ کسی پیر فقیر نے انھیں کہا ہے کہ جب بھی یہ مسجد مکمل ہو گی، تمہارا انتقال ہو جائے گا۔ جب 1975 میں رئیس غازی محمد کا انتقال ہوا تو اس وقت بھی مسجد کے بڑے مینار کی تعمیر کا کام جاری تھا۔ سنہ 1950 میں ایک نئے مسئلے کی نشاندہی ہوئی، سیم کی وجہ سے مسجد کی عمارت کو نقصان پہنچنے کا خطرہ تھا۔ اس خطرے کے پیش نظر تب تک بننے والی تمام عمارت کو گرا دیا گیا اور 20 فٹ بلند ایک چبوترہ بنا کر اس پر نئے سرے سے مسجد کی عمارت تعمیر کی گئی۔ اس سے مسجد کی پائیداری کے ساتھ خوبصورتی اور جلال و عظمت میں بھی اضافہ ہو گیا۔سنہ 1975 میں رئیس غازی محمد کی وفات کے بعد اس مسجد کی تعمیر کا فریضہ ان کے بڑے بیٹے رئیس شبیر محمد نے سنبھال لیا، جو خود بھی درویش صفت انسان تھے اور صوبائی اور قومی اسمبلی کے رکن بھی رہے تھے۔ ان کا انتقال 2 اپریل 2021 کو کراچی میں ہوا۔ رئیس شبیر محمد کے انتقال کے بعد اب اس مسجد کا انتظام ان کے صاحبزادے اور سابق وفاقی وزیر سردار رئیس منیر احمد کے ہاتھ میں ہے۔سنہ 1982 میں مسجد کی تعمیر مکمل ہوئی تو اسے شہرت ملنا شروع ہوئی۔ دنیا بھر سے سیاح اس مسجد کو دیکھنے کے لیے آنے لگے۔ 22 دسمبر1986 کو اس مسجد کو اسلامی فن تعمیر کے فروغ کے لیے قائم کیے گئے آغا خان ایوارڈز فار اسلامک آرکیٹکچر سے نوازا گیا۔

About admin

Check Also

چکوال میں نماز جنازہ کے دوران لوگوں پر ہوائی مخلوق کا حملہ ۔۔ 60افراد بارے انتہائی افسوسناک خبر ، ہسپتالوں میں ایمر جنسی نافذ

چکوال میں نماز جنازہ کے دوران لوگوں پر ہوائی مخلوق کا حملہ ۔۔ 60افراد بارے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Powered by themekiller.com